جائیداد کے کاغذات کی چانچ پڑتال صرف 150 روپے میں

property-app_L.jpg

سندھ بورڈ آف ریونیو نے جائیداد کے کاغذات کی صرف 150 روپے میں جانچ پڑتال کا سسٹم متعارف کروا دیا۔

بورڈ آف ریونیو نے اصلاحات پروگرام اور کاروبار کو آسان بنانے کے منصوبے کے تحت اراضیوں پر قبضوں، جعلی دستاویزات اور دہرے الاٹمنٹس کی روک تھام کے لیے بڑے نوعیت کے فیصلے کیے ہیں۔

اصلاحات پروگرام کے تحت اب ہر شہری کو جائیداد کی خریداری سے قبل آن لائن پراپرٹی کے کاغذات کی جانچ سمیت جائیداد پر اگر کوئی مقدمہ بھی ہے تو معلوم ہوسکے گا جبکہ بورڈ آف ریونیو کے متعارف کردہ مثالی پورٹل سے شہریوں کو صرف 150 روپے کی قانونی فیس کے عوض دستاویزات کی جانچ پڑتال کی سہولت حاصل ہوگئی ہے۔

بورڈ آف ریونیو سندھ کے ممبر آر اینڈ ایس روشن علی شیخ نے بتایا کہ سندھ میں سب رجسٹرار کے اختیارات کو بھی کم کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے اور دستاویزات کی جانچ کے لیے سب رجسٹرار کے وقت کو تین ماہ سے تین دن مقرر کردیا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ جائیداد کی دستاویزات کی منتقلی کے لیے 3روز سے زائد لگنے پر سب رجسٹرار کو معطل کرنے کے ساتھ ہی سخت تادیبی کاروائی بھی عمل میں لائی جائے گی اور اس ضمن میں رواں ہفتے ہی نوٹی فکیشن جاری کردیا جائے گا۔

بورڈ ریونیو میں پہلے پراپرٹی رجسٹریشن کے لیے 7 ماہ کا وقت درکار ہوتا تھا لیکن اب اس مدت کو گھٹا کر17 دن کردیا گیا ہے۔مستقبل میں اس مدت کو مزید گھٹا کر6 یوم کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔اب بورڈ آف ریونیو کے پورٹل کے توسط سے سندھ بھر کی تمام رجسٹریز آن لائن چیک کی جاسکتی ہیں۔

بورڈ کی آٹومیشن ٹیم کو ڈیجیٹلائزیشن کے عمل کے دوران سندھ میں اب تک 63ہزار زمینوں کی جعلی انٹریز کا انکشاف ہوا ہے تاہم ان تمام جعلی انٹریز کے ریکارڈ کو 3ماہ میں درست کرلیا جائے گا۔پورے سندھ کی زمین کا ڈیٹا آن لائن کردیا گیا ہے۔

بورڈ آف ریونیو کے اصلاحات پروگرام کا دوسرا مرحلہ مکمل ہونے کی صورت میں زمین کی جانچ پڑتال گھر بیٹھے ہوسکے گی، کراچی میں بورڈ آف ریونیو کی اراضی کا حصہ 70 فیصد ہے، بورڈ کی ڈیجیٹلائزیشن کے ساتھ اب کے ڈی اے، کے ایم سی، ایل ڈی اے، ایم ڈے کے ساتھ نجی ہاؤسنگ سوسائٹیز کو بھی ڈیجیٹلائزیشن میں آنا ہوگا اس وقت صرف ڈی ایچ اے کا ڈیٹا ڈیجیٹلائز ہے۔

روشن شیخ نے کہا کہ تمام ڈیٹا سامنے آنے پر ایک پراپرٹی کے دہرے دستاویزات والے الاٹمنٹس کی شکایت بھی ختم ہوجائے گی، اب میر پور خاص یا مٹھی کی پراپرٹی کے کاغذات بھی کراچی میں بیٹھ کر چیک کیے جا سکتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ بورڈ آف ریونیو نے رواں سال 9ارب 40کروڑ روپے کے اسٹیمپ سے ریونیو حاصل کیا ہے، آٹومیشن مکمل ہونے کے بعد توقع ہے کہ اسٹیمٹ ریونیو کی وصولیاں 60 فیصد بڑھ جائیں گی، ڈیجیٹلائزیشن مکمل ہونے کے بعد اسٹیمپ سے ریونیو وصولیوں کا حجم 15 ارب روپے تک بڑھنے کی توقع ہے۔

آن لائن سہولت کی مکمل فراہمی اور اسٹیمپ آٹومیشن کے بعد سب رجسٹراد کی کمائی ختم ہوجائے گی جس کے بعد کوئی بھی سب رجسٹرار کے عہدے پر تقرری پسند نہیں کرے گا۔

بورڈ آف ریونیوسمیت متعلقہ اداروں کی ڈیجیٹلائزیشن پر خصوصی توجہ مرکوز کی ہوجارہی ہے، بورڈ نے بینکوں کو بھی الیکٹرانک لنک فراہم کیا ہے۔

Share this post

PinIt

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top