پنجاب حکومت کا انقلابی اقدام

HealthCard.jpg

حکومت پنجاب نے شعبہ صحت میں انقلابی اقدام اٹھاتے ہوئے ہیلتھ کارڈ تقسیم کرنے کا اعلان کردیا جس کے تحت 9 بڑی بیماریوں کا علاج کراویا جاسکے گا۔

لاہور میں وزیرصحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے اعلان کیا کہ خیبرپختونخواہ کی طرز پر اب صوبے کے 36 اضلاع میں بھی صحت کارڈ تقسیم کیے جائیں گے۔

اُن کا کہنا تھا کہ ہیلتھ کارڈ سے استفادہ کرنے والی 30 فیصد آبادی کے 70 فیصد میڈیکل اخراجات حکومت ادا کرے گی جبکہ مریض کو صرف 30 فیصد بل ادا کرنا ہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ ’پنجاب میں 40 فیصد سے زیادہ لوگ غربت کی لکیر کے نیچے زندگی بسر کررہے ہیں، حکومت پنجاب 7 لاکھ 20 ہزار مالیت کے کارڈ جاری کرے گی تاکہ شہریوں کو ریلیف فراہم کیا جائے۔ سرکاری کے علاوہ پرائیوٹ اسپتالوں میں بھی ہیلتھ کارڈ استعمال کیا جاسکے گا‘۔

اُن کا کہنا تھا کہ ’حکومت نے ہر ضلعے میں اسپتال مختص کردئیے جہاں لوگوں کو سہولیات فراہم کی جائیں گی۔

صحت کارڈ کی تقسیم کا عمل پنجاب کے پس مانندہ علاقے راجن پور سے شروع ہوگا، دوسرے مرحلے میں ڈیرہ غازی خان اور مارچ کے آخر تک مظفر گڑھ میں کارڈ تقسیم کیے جائیں گے‘۔

ڈاکٹر یاسمین راشد کا کہنا تھا کہ 72 لاکھ فیملیز استفادہ کریں گی جبکہ اس کارڈ میں موت کی صورت میں 10 ہزار بیریل الاؤنس بھی رکھا گیا ہے۔

وزیر صحت کا کہنا تھا کہ اسٹیٹ لائف انشورنس کمپنی کے تعاون سے یہ کارڈ دیئے جا رہے ہیں جو تین سال کے لیے قابل استعمال ہوگا جبکہ زائد المعیاد ہونے پراس کی تجدید کرائی جاسکے گی۔

ہیلتھ کارڈ کی تقسیم کا عمل 22 فروری سے ہوگا۔ پنجاب کے تمام پسماندہ علاقوں اس کی تقسیم کی جائے گی۔

Share this post

PinIt

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top