پاکستان، بنگلہ دیش کے خلاف 94 رنز سے کامیاب

بنگلہ دیش کو میچ جیتنے کے لئے 316 رنز بنانا تھے مگر اس کی پوری ٹیم 44 اعشاریہ 1بال پر 221 رنز بناکر آؤٹ ہوگئی اور یوں پاکستان نے 94 رنز سے یہ میچ جیت لیا۔

ورلڈ کپ 2019 کا آج لارڈز میں ہونے والا میچ پاکستان نے 94 رنز سے جیت لیا ۔ بنگلہ دیش کو میچ جیتنے کے لئے پاکستان کی طرف سے ملنے والا 316 رنز کا ہدف حاصل کرنا تھا لیکن اس کی پوری ٹیم 221 رنز بناکر آؤٹ ہوگئی اور یوں پاکستان نے بنگلہ دیش کو اپنے آخری میچ میں شکست دے دی۔

پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے اپنی اننگز میں 9 کھلاڑیوں کے نقصان پر 315 رنز بنائے اور بنگلہ دیش کو میچ جیتنے کے لئے 316 رنز کا ہدف دیا جسے وہ حاصل کرنے میں ناکام رہا۔

پاکستان سیمی فائنل کی دوڑ سے باہر، ورلڈ کپ کا سفر بھی ختم :
میچ جیتنے کے باوجود پاکستان ورلڈ کپ کی دوڑ سے باہر ہوگیا جس کے ساتھ ہی سیمی فائنل میں ایک دوسرے سے ٹکرانے والی چاروں ٹیموں کا بھی فیصلہ ہوگیا۔

گوکہ یہ فیصلہ آج کے میچ سے پہلے ہی تقریباً طے تھا مگر پاکستانی ٹیم سیمی فائنل تک رسائی اسی وقت حاصل کرسکتی تھی جبکہ وہ بنگلہ دیش کے خلاف 400 رنز بنانے کے ساتھ ساتھ اسے84 رنز پر آؤٹ بھی کرلیتی۔

دوسری صورت یہ تھی کہ پاکستان آج بنگلہ دیش کے خلاف 350رنز بناتا اور اسے 311رنز سے شکست دے دیتا یعنی اسے بنگلہ دیش کو صرف 39 رنز پر آؤٹ کرنا ہوتا، لیکن ایسا بھی نہ ہوسکا اور پاکستان صرف 315 رنز ہی بناسکا ۔

بظاہر ان امکانات کا ہونا مشکل نظر آتا تھا اورہوا بھی یہی لہذا پاکستان ناصر ف سیمی فائنل کی دوڑ سے باہر ہوگیا بلکہ آج اس کا ورلڈ کپ کا سفر بھی اپنے اختتام کو پہنچا۔

سیمی فائنل کے لئے جو چار ٹیمیں ایک دوسرے سے پنجہ آزما ہوں گی ان میں آسٹریلیا، نیوزی لینڈ بھارت اور انگلینڈ شامل ہیںتاہم کون سی ٹیم کس ملک کے خلاف کھیلے گی اس کا فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے۔

بنگلہ دیش کی اننگز:
بنگلہ دیش کی اننگز کی ابتدا تمیم اقبال اور سومیاسرکار نے کی لیکن اسکور ابھی 26 رنز ہی ہوا تھا کہ محمد عامر نے فخر زمان کے ہاتھوں انہیں کیچ کرادیا۔ سرمیا کا اپنا اسکور 22 رنز رہا۔

دوسری وکٹ ٹیم کے مجموعی اسکور 48 رنز پر گری۔ اس بار شاہین شاہ آفریدی نے تمیم اقبال کو بولڈ کردیا جو 8 رنز پر کھیل رہے تھے۔

مشفق الرحیم بھی تمیم اقبال کی طرح ہی کلین بولڈ ہوئے لیکن اس بار بالر وہاب ریاض تھے جنہوں نے مشفق کو 16 رنز پر پویلین لوٹنے پر مجبور کردیا۔

مشفق سے پہلے شکیب الحسن بیٹنگ کرنے آئے جبکہ مشفق کی جگہ لٹن داس نے لی تاہم ان کی بیٹنگ کا سفر جلد ہی ختم ہوگیا۔ وہ 32 رنز پر تھے کہ شاہین شاہ آفریدی نے حارث سہیل کے ہاتھوں انہیں کیچ کرادیا۔ ان کی جگہ محمود اللہ نے لی۔

اسی دوران شاہین شاہ آفریدی 64 رنز پر کھیلنے والے شکیب الحسن کی وکٹ لے اڑے۔ یہ بنگلہ دیش کی بہت قیمتی وکٹ تھی اور پاکستان کے لئے بھی اسے گرانا اہم تھا۔ ان کے آؤٹ ہونے کے بعد مصدق حسین بیٹنگ کرنے آئے۔

اس کے بعد ایک کے بعد ایک بیٹسمین آؤٹ ہوتا چلا گیا۔ مصدق حسین 16 رنز بناکر شاداب خان کی بال پر آؤٹ ہوئے۔ محمد سیف الدین صفر پر اور مشرفی مرتضیٰ صرف 15 رنز پر آؤٹ ہوگئے۔

دسویں اور آخری وکٹ کے طور پر مستفیق الرحمٰن آئے جنہوں نے مہدی حسن مرزا کے ساتھ بیٹنگ کرنا تھا لیکن شاہین شاہ آفریدی نے انہیں بغیر کوئی رنز بنائے ہی بولڈ کردیا۔

یوں بنگلہ دیش کی پوری ٹیم 45 اوور میں 221 رنز بناکر آؤٹ ہوگئی اور پاکستان نے 94 رنز سے یہ میچ جیت لیا۔

پاکستانی اننگز:
پاکستان کی جانب سے فخر زمان امام الحق نے اننگز کا آغاز کیا جبکہ بنگلہ دیش کی طرف سے پہلا اوور مہدی حسن مرزا نے کرایا جس میں صرف 1 رنز بنا جو فخر زمان نے بنایا۔

آٹھویں اوور میں فخز زمان صرف 13 رنز بناکر آؤٹ ہوگئے۔ بالر محمد سیف الدین تھے جبکہ ان کا کیچ مہدی حسن مرزا نے لیا۔ فخر زمان نے 31 بالوں کا سامنا کیا جبکہ اس وقت پاکستان ٹیم کا مجموعی اسکور 23 رنز تھا، ان کے بعد بابر اعظم نے بیٹنگ کی ذمے داری سنبھالی۔

بابر اعظم گرتی ہوئی وکٹوں کو روکنے اور اسکور کو آگے بڑھانے کے حوالے سے پہچانے جاتے ہیں جبکہ امام الحق بھی اچھا اسکور بنانے اور اچھے شارٹس کھیلنے کے لئے مشہور ہیں ۔۔۔۔ اور یہی کام ان کھلاڑیوں نے آج بھی انجام دیا۔

انہی کی بیٹنگ کی بدولت پاکستان کے پہلے 50 رنز مکمل ہوئے جبکہ 15 ویں اوور تک دونوں کی پارٹنر شپ بھی 50 کا ہندسہ عبور کرگئی یہاں تک کہ 22 ویں اوور میں پاکستانی اسکور 100 کا ہندسہ عبور کرگیا۔

28 ویں اوور میں دونوں کی پارٹنر شپ میں 135 بالوں پر 121 رنز بن چکے تھے تاہم 180 کے اسکور پر بابر اعظم سنچری سے صرف 4 رنز کے فرق سے آؤٹ ہوگئے۔

بابر اعظم کی جگہ امام الحق کا ساتھ دینے کے لئے محمد حفیظ نے بیٹنگ اینڈ سنبھالا۔ امام الحق 99 بالز پر 42 ویں اوور میں سنچری بنانے میں کامیاب رہے جس میں حفیظ نے ان کا بھرپور ساتھ دیا۔

مگر اسی اوور میں جیسے ہی امام الحق کے 100 رنز ہوئے وہ ہٹ وکٹ ہوگئے۔ انہوں نے بیک ورڈ پر جاکر مستفیض کی بالر کو ہٹ لگانے کو کوشش کی مگر خود ہی ان کا پاؤں وکٹ سے ٹکرا گیا اور انہیں آؤٹ قرار دے دیا گیا۔

اسکور میں صرف 2 رنز کا اضافہ ہوا تھا کہ پاکستان کی ایک اور وکٹ گر گئی۔ محمد حفیظ 27 رنز بناکر مہدی حسن کی بال پر کیچ آؤٹ ہوگئے۔ 44 ویں اوور میں پاکستان کی ایک اور مہنگی وکٹ حارث سہیل کی شکل میں صرف 6 رنز پر گر گئی۔ یہ پاکستان کو ہونے والا سب سے بڑا نقصان تھا۔

اس دوران کپتان سرفراز بیٹنگ کرنے آئے مگر وہ 2 رنز کے بعد ہی زخمی ہوگئے جن کی جگہ وہاب ریاض کھیلنے آئے اور عماد وسیم کے ساتھ اسکور کو آگے بڑھانا چاپا لیکن محمد سیف الدین نے انہیں صرف 2 رنز پر پویلین لوٹنے پر مجبور کردیا۔

ساتویں وکٹ شاداب خان کی گری جنہوں نے 1 رنز اسکور کیا۔ ان کی جگہ محمد عامر آۓ جبکہ عماد 26 رنز پر کھیل رہے تھے۔

آخری اوور میں عماد وسیم چھکا لگانے کی کوشش میں 43 رنز پر آؤٹ ہوگئے۔ یوں پاکستان کی آٹھویں وکٹ گری جبکہ ان کے فوری بعد محمد عامر 8 رنز پر آؤٹ ہوگئے۔

اس صورتحال پر سرفراز کو واپس آنا پڑا اور انہوں نے شاہین شاہ آفریدی کے ساتھ آخری بال کھیلی اور ایک رنز بنایا۔ دو رنز ان کے پہلے کے تھے اس طرح شاہین شاہ بغیر کوئی رن بنائے اور سرفراز احمد 3 رنز پر ناٹ آؤٹ رہے۔

بنگلادیش کی ٹیم:
بنگلہ دیش نے اپنی ٹیم میں دو تبدیلیاں کی گئی ہیں۔ شبیر رحمٰن اور روبیل حسن کے بجائے محموداللہ اور مہدی حسن کو کھلایا گیا ہے۔

ٹیم ان کھلاڑیوں پر مشتمل ہے: تمیم اقبال، سومیاسرکار، شکیب الحسن، مستفیض الرحیم، لٹن داس، محمد اللہ، مصدق حسین، مہدی حسن مرزا، محمد سیف الدین، مشرفی مرتضیٰ اور مستفیض الرحمٰن۔

پاکستانی ٹیم:
امام الحق، فخر زمان، بابر اعظم، محمد حفیظ ، حارث سہیل، سرفراز احمد، عماد وسیم، شاداب خان، محمد عامر ، وہاب ریاض اور شاہین شاہ آفریدی۔

پوائنٹس:
پاکستان اس وقت 9 پوائنٹس کے ساتھ پانچویں اور بنگلہ دیش سات پوائنٹس کے ساتھ ساتویں نمبر پر ہے۔

پاکستان کے سیمی فائنل میں پہنچنے کے مشکل ترین امکانات: 
آج اگر پاکستان کو سیمی فائنل تک پہنچنا ہے تو اسے بنگلادیش کو400 رنز بنانے کے ساتھ ساتھ مخالف ٹیم کو 84 رنز پر آؤٹ بھی کرنا ہوگا۔

اگر فرض کرلیا جائے کہ پاکستان نے 350 رنز بنائے تو اسے 311 رنز سے میچ جیتنا ہوگا یعنی بنگلہ دیش کو صرف 39 رنز پر آؤٹ کرنا ہوگا۔ بظاہر ان امکانات کا ہونا مشکل نظر آتا ہے۔

Share this post

PinIt

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top