آسٹریلیا نے سری لنکا کو 87 رنز سے ہرا دیا

سری لنکا کا ٹاس جیت کر آسٹریلیا جیسی بڑی اور تجربہ کار کھلاڑیوں کی ٹیم کو پہلے بیٹنگ کا موقع دینے کا فیصلہ غلط ثابت ہوا، آسٹریلیا نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 334 رنز بنائے لیکن سری لنکا کی ٹیم ہدف کا تعاقب کرنے میں ناکام رہی۔

سری لنکا تمام کوششوں کے باوجود 45 اعشاریہ پانچ اوورز میں247 رنز ہی بناسکا اور یوں آسٹریلیا نے یہ میچ جیت لیا۔

سری لنکا کی ہار کا بنیادی سبب اس کے زیادہ تر کھلاڑیوں کا گھبراہٹ میں جلد آؤٹ ہونا تھا خاص کر آخری نمبروں پر آنے والے کھلاڑیوں کا نہایت کم اسکور پر آؤٹ ہونا۔

اس سے قبل سری لنکن ٹیم 21 اوورز تک بغیر کسی دباؤ کے کھیلتی نظر آئی جب ایک وکٹ کے نقصان پر اس کا اسکور 139 رنز تھا ۔ آؤٹ ہونے والے کھلاڑی کشال پریرا تھے جنہوں نے 52 رنز بنائے ۔

ڈیموتھ کرونا رتنے، اور لہیرو تھرمانے نے 22 اوورز میں اسکور کو 141 رنز تک پہنچایا تھا۔ آسٹریلیا کو سری لنکا کی دوسری وکٹ 153 رنز کے مجموعی اسکور پر ملی جب لہیرو تھرمانے صرف 16 رنز بناکر آؤٹ ہوئے۔ ان کی وکٹ بہیرین ڈورف نے لی۔

اس مقاب پر لگتا تھا کہ اگرچہ 335 رنز کا ہدف مشکل شمار ہوتا لیکن جس طرح سے سری لنکا کے بیٹسمین کسی گھبراہٹ کے بغیر یا دباؤ میں آئے اب تک اطمیان سے کھیل رہے تھے اور اسکور 27 اوورز تک 200 کے قریب بھی پہنچ گیا تھا اور اندازا ہونے لگا تھا کہ میچ آخر میں دونوں ٹیموں کے لئے سنسنی خیز ثابت ہوگا لیکن ایسا نہ ہوسگا۔

بازی اس وقت پلٹی جب آسٹریلیا نے سری لنکا کے اسکور کو روکنے کی غرض سے بالنگ میں رچرڈ سن کو آزمایا جو سب سے مہنگی وکٹ لینے میں کامیاب ہوگئے۔ انہوں نے 97 پر کرونا رتنے کو آؤٹ کردیا۔ یوں سری لنکا کو پہنچنے والا یہ تیسرا نقصان تھا۔

چوتھا وکٹ میتھیوز کا گرا۔ ان کی وکٹ کومنس نے لی۔ اسکور تھا 9 رنز۔ ان کی جگہ نئے بیٹسمین تھے سری وردھنا جبکہ مینڈس پہلے سے کریز پر موجود تھے۔

200 رنز سے زائد رنز کا اسکور بنانے میں کامیاب ہونے والے سری لنکن ٹیم کے دوسرے کھلاڑی کے آؤٹ ہونے کے بعد بیٹنگ لائن لڑکھڑا گئی اور 209 رنز پر آدھی ٹیم واپس پویلین پہنچ گئی۔

سری وردھنا کو اسٹاک نے 3 رنز پر آؤٹ کردیا۔ یہ سری لنکا کو ہونے والا پانچواں نقصان تھا۔ اس کے بعد تو ہر بیٹسمین جلد بازی کا مظاہرہ کرتا نظر آیا جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ اسکور روک سا گیا اور وکٹس گرتی چلی گئیں۔

پریرا سات ، اڈانا 8 ،مینڈس 30، ملنگا ایک بناکر آؤٹ ہوئے۔ زیادہ تر وکٹس جلد بازی میں کھیلے گئے غلط شارٹس کے سبب گریں۔

آسٹریلیا 334 رنز بناکر آؤٹ :
ورلڈ کپ 2019 کے تحت سری لنکا اور آسٹریلیا کےدرمیان آج لندن میں ہونے والے میچ کا ٹاس سری لنکن کپتان نے جیت کر پہلے آسٹریلیا کو بیٹنگ کرنے کا موقع دیا۔

آسٹریلیا نے مقررہ 50 اوورز میں سات وکٹ کے نقصان پر 334 رنز بنائے جس کے بعد سری لنکا کو یہ میچ جیتنے کے لئے 335 رنز کا مشکل ہدف ملا۔

اننگز کا آغاز آرون فنچ اور ڈیوڈ وارنر نے کیا اور اسکور کو 80 رنز تک پہنچایا۔ اس دوران انہوں نے بالرز کا جم کا مقابلہ کیا لیکن ڈی سلوا بلاخر وارنر کی وکٹ لینے میں کامیاب ہو ہی گئے۔

وارنر 26 رنز بناکر بولڈ ہوئے تو فنچ کا ساتھ دینے کے لئے عثمان خواجہ بیٹنگ کرنے آئے۔ انہوں نے ٹیم کے مجموعی اسکور کو 20 اووز تک بڑھایا لیکن 10 کے انفرادی اسکور پر ڈی سلوا کا شکار بن گئے۔

بیٹنگ کے لئے آنے والے اگلے بیٹسمین اسٹیو اسمتھ تھے جن کے آتے ہی ناصرف فنچ کے اسکور بنانے اور چوکے چھکے لگانے میں تیزی آئی بلکہ خود اسمتھ نے بھی تیزی سے اسکور کو آگے بڑھایا۔ یہاں تک کہ فنچ سنچری بنانے میں بھی کامیاب ہوگئے۔

انہوں نے 99 بالیں کھیل کر 102 رنز بنائے جن میں 4 چھکے بھی شامل تھے۔ اسمتھ اور فنچ کی پارٹنر شپ کی بات کریں تو انہوں نے 81 بالوں پر ہی 101 بنالئے تھے اور جب اسکور 273 رنز ہوا تو فنچ ایک اونچا شارٹ کھیل گئے اور یودانا نے موقع ضائع کئے بغیر ان کا کیچ پکڑ لیا۔ یوں فنچ 153 رنز پر آؤٹ ہوگئے۔

فنج کے ساتھ کھیلتے ہوئے اسمتھ بھی بہت تیزی سے رنز بنانے میں کامیاب رہے جبکہ ان کا ساتھ دینے کے لئے میکسوئل بیٹنگ کرنے آئے لیکن ملنگا نے اسمتھ کو 73 رنز سے آگے بہ بڑھنے دیا اور کلین بولڈ کردیا۔

مارش کوشش کے باوجود تین رنز سے زیادہ نہ بناسکے انہیں یوڈانا نے آؤٹ کیا۔ ان کی جگہ ایلکس کیرے نے لی لیکن وہ پانچواں رنز بناتے ہوئے رن آؤٹ ہوگئے اور یوں آسٹریلیا کی 317 رنز پر چھٹی وکٹ گر گئی۔

کومنس ساتویں وکٹ کے طور پر کھیلنے آئے لیکن وہ بغیر کوئی رنز بنائے ہی رن آؤٹ ہوگئے۔ نئے کھلاڑی اسٹارک نے ان کی جگہ لی ۔

50 ویں اوور تک میکسوئل 46 اور اسٹاک 5 رنز بناکر ناٹ آؤٹ رہے۔

سری لنکن ٹیم:
ڈیموتھ کرونا رتنے، کشال پریرا، لہیرو تھرمانے، کشال مینڈس، دھنن جے ڈی سلوا، تھسارا پریرا، ایسورو یودانا، ملینڈا سری وردھنا، لیستھ ملنگا، انجیلو میتھیوز اور نووان پرادیپ۔

آسٹریلین ٹیم:
ڈیوڈ وارنر، آرون فنچ، عثمان خواجہ، اسٹیو اسمتھ، شون مارش ، گلین میکسویل، ایلکس کیرے، پیٹ کومنس، مچل اسٹارک، بہیرین ڈورف، کین رچرڈ سن۔

سری لنکا نے اب تک چار میچوں میں سے ایک میچ جیتا ہے جس کے بعد پوائنٹس ٹیبل پر اس کا نمبر پانچویں اور آسٹریلیا کا نام تیسرے نمبر پر درج ہے۔

آج کا دوسرا میچ :
آج ایونٹ کا 21 واں میچ افغانستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان کارڈف میں کھیلا جارہا ہے۔

Share this post

PinIt

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top